غزل
اُف رے ہُجوم نطق کہ خاموش ہو گئے
ہم غایتِ ظہور سے روپوش ہو گئے

پایا جو مہر و ماہ میں ذوقِ سپردگی
ذرّے تمام حلقۂ آغوش ہو گئے

اے گوش وقت ! سُن کہ ادا کر رہا ہوں میں
وہ لفظ جن کے حرف فراموش ہو گئے

چھیڑا تھا ہم نے جسم کی خلوت میں سازِ جاں
جب ساز چھڑ گیا تو گراں گوش ہو گئے

ساقی کے بندوبست سے یاران کم طلب
تنگ آئے اس قدر کہ بلا نوش ہو گئے

کتنے معانقے تھے کہ بے جذبۂ وصال
صرفِ فشار سینہ و آغوش ہو گئے

دیکھ اے لباسِ تنگِ وجود و بقا کہ ہم
ننگِ برہنگی سے کفن پوش ہو گئے